سی پیک پر بھارت کو منہ کھانی پڑگئی ، اعتراضات پر چین نے ایسا جواب دیدیا جسنےمودی سرکار کا ہوش اڑاکر رکھ دیا

چین نے بھارت کے سی پیک پر اعتراضات کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ مودی حکومت بیلٹ اینڈ روڈ فورم کے اجلاس کے بائیکاٹ کے فیصلے پر جلد بازی کا مظاہرہ نہ کرے ۔ قومی اخبار نے بین الاقوامی خبررساں ادارے کی رپورٹ کو مد نظر رکھتے ہوئے کہا ہے کہ بھارت پاک چین اقتصادی رہداری اعتراضات کا بہانہ بنا کر بیلٹ اینڈ روڈ فورم کے ہونیوالے دوسرے اجلاس میں شرکت سے انکار کے عمل کو بلا جواز قراردیتے ہوئے بھارت کو جلد بازی میں فیصلہ کرنے سےباز رہنے کا کہا ہے ۔ بھارت نے 2017میں بیلٹ روڈ فورم کے پہلے اجلاس کا بائیکاٹ کیا تھا ۔ چین کی وارت خارجہ کے ترجمان لو کنگ کا میڈیا بریفنگ میں کہنا تھا کہ بی آر آئی ایک معاشی پروجیکٹ ہے جس میں جنوبی ایشیائی ، خلیجی ممالک اور یورپی ممالک ایک دوسرے کیساتھ منسلک ہو جائیں اور تجارتی فوائد حاصل کریں گے ۔ اس پروجیکٹ کا کسی بھی زمینی تنازع یا ملکیت سے کچھ لینا دینا نہیں ہے اس لیے بھارت بے جا کی ضد چھوڑ دے ۔ واضح رہے کہ چین میں 25اپریل سے 27اپریل کے درمیان بیلٹ اینڈ روڈ فورم کادوسرا اجلاس ہونے جارہا جس میں پاکستان ، ترکی اور روس کےسربراہان سمیت 40ممالک کے اعلیٰ حکام شرکت کریں گے تاہم بھارت نے روایتی ہٹ دھرمی کا مظاہرہ کرتے ہوئے سی پیک پر بلاجواز اعتراض کی آڑ میں اجلاس میں شرکت سے انکار کر دیا ہے ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں