اشتہارات

چین کی 8000 سے زائد نیپالی اشیا کی ڈیوٹی فری رسائی کی پیشکش

site_admin

کھٹمنڈو :- نیپالی نائب صدر نے کہا ہے کہ چین نے 8000 سے زائد نیپالی اشیا کو ڈیوٹی فری رسائی اور نیپال کے لیے ایک بڑی منڈی کا دروازہ کھولنے کی پیشکش کی ہے ، چائنہ ریڈیو انٹرنیشنل کے مطابق نیپال کے نائب صدر نندہ بہادر پون نے کہا کہ نیپال اپنی برآمدات چین کے ساتھ بڑھا کر ترقی کر سکتا ہے ۔نیپال کے کسٹمز حکام کے مطابق حالیہ مالی سال کی پہلی ششماہی میں جو جولائی 2017 کے وسط سے شروع ہوئی ہے اب تک نیپال نے چین سے 15.19 ملین امریکی ڈالر کی برآمدات کے بدلے 656.86 ملین امریکی ڈالر کی اشیا درآمد کی ہیں ۔

چین کے ساتھ تجارتی خسارے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے نیپال کے نائب صدر نے کہا کہ بڑی آبادی کی وجہ سے نیپالی مصنوعات کے لیے چین ایک بڑی مارکیٹ ہے ۔ جس سے نیپال کو ہر صورت فائدہ اٹھانے کے قابل ہونا چاہیے ۔ چین نیپال سرحد پر تجارت کرنے والے تاجروں کی تنظیم نیپال ہمالیہ ٹرانس بارڈر کامرس ایسوسی ایشن کی میٹنگ کے افتتاحی سیشن سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ نیپال اپنی برآمدات کو فروغ دے کر معاشی خوشحالی حاصل کر سکتا ہے جیسا کہ چین نے کی ہے ۔

اطلاع کے مطابق فی الحال رسواگھدی جیئیلونگ ہی بین الاقوامی تجارت کے لئے دونوں ممالک کے درمیان واحد سرحدی تجارتی راستہ ہے ۔ یہ سرحدی راستہ 2015 میں تباہ کن زلزلے سے متاثر ہوا لیکن چند ماہ بعدہی دوبارہ کھول دیا گیا۔واضح رہے نیپال نے نئی پالیسی کے تحت بھارت کے بجائے چین کے ساتھ تجارتی روابط بڑھانے کا فیصلہ کیا ہے۔

دیگر متعلقہ خبریں

اشتہارات